گل مکئی ( ملالہ یوسفزئی ) کی ڈائری

صوبہ سرحد کے ضلع سوات میں 2009 میں ایک طرف سکیورٹی فورسز اور مسلح طالبان کی جھڑپوں میں درجنوں عام شہریوں کی ہلاکتوں کا سلسلہ جاری تھا تو دوسری طرف مسلح طالبان نے درجنوں سکولوں کو تباہ کیا جن میں سے زیادہ تر لڑکیوں کے تھے۔

اسی سال جنوری میں طالبان نے لڑکیوں کے سکول جانے پر بھی پابندی لگانے کا اعلان کیا تھا۔ اس صورتحال میں طالبات پر کیا گزر رہی تھی، بی بی سی ارود ڈاٹ کام نے اس وقت ساتویں جماعت کی طالبہ ملالہ یوسفزئی کی کہانی ایک ڈائری کی صورت میں شائع کی تھی۔ اس وقت سکیورٹی کے خدشے کے پیش نظر ملالہ یوسفزئی نے ’گل مکئی‘ .کے فرضی نام سے اپنی ڈائری لکھی تھی۔ آپ اس ڈائری کی تمام قسطیں یہاں پڑھ سکتے ہیں

پہلی قسط: سکول جانا ہے۔۔۔۔
دوسری قسط: ’شاید دوبارہ سکول نہ آسکوں
تیسری قسط: ’بلڈنگ کو کیوں سزا دے رہے ہیں‘
چوتھی قسط: ’آنر بورڈ پر شاید اس سال کسی کا نام نہ لکھاجائے‘
پانچویں قسط: ’ڈر ہے سکول ہمیشہ کیلیے بندنہ ہوجائے‘
چھٹی قسط: ’سوات میں لڑکوں کے سکول کھل چکے ہیں‘
ساتویں قسط: ’ڈرو مت بیٹی یہ امن کی فائرنگ ہے‘
آٹھویں قسط: پردے کاخیال رکھو، برقعہ پہن کرآیا کرو
نویں قسط: ایف ایم کے ہوتے ہوئے امن نہیں آئے گا
دسویں قسط: ’جنت میں حوریں انتظار کر رہی ہیں‘

یہ ڈائری بی بی سی اردو پر چھپی تھی اور تمام لنک بی بی سی اردو پر کھلتے ہیں۔

http://www.bbc.co.uk/urdu/interactivity/2012/10/121016_malala_diaries_aw.shtml

Related Posts

Comments

comments

Leave a reply

required

required

optional



five − = 3

%d bloggers like this: