ملالہ کا یو این او میں خطاب

امام دین؛

ملالہ نے 13جولائی 2013ء بروز ہفتہ کو اپنی سالگرہ کے دن یو این اور میں خطاب کیا۔ اگرچہ یہ خطاب انگریزی میں تھا لیکن عوام میں پھیلائی گئی ڈس انفارمیشن کو تحلیل کرنے کے لیے اس تقریر سے چند اقتباسات اردو میں پیش خدمت ہیں۔
text-of-malala
انسان کو اپنی آواز کی اہمیت کا اندازہ تب ہوتا ہے جب اسے جبراً خاموش کر دیا جائے۔
malala-day_1373694543_4166
میں طالبان سے بھی نفرت نہیں کرتی۔ اگر میرے ہاتھ میں بندوق ہو اور وہ میرے سامنے کھڑا ہو جس نے مجھے گولی ماری تو بھی میں اسے گولی نہیں ماروں گی۔
image_update_fe982aa0f9114d1c_1373635935_9j-4aaqsk
میں نے یہ وراثت مارٹن لوتھر کنگ، نیلسن منڈیلا اور محمد علی جناح سے پائی۔ عدم تشدد کی یہ سوچ میں نے گاندھی، باچا خان اور مدر ٹریسا سے سیکھی۔
51e0b74c9f4c4
مشہور کہاوت کی قلم تلوار سے زیادہ طاقتور ہوتا ہے سچ ثابت ہوئی۔
malala-day_1373694543_4166
ایک سکول کے بچے سے جب صحافی نے پوچھا کہ کیا طالبان کتاب کیخلاف ہیں تو اس نے جواب دیا کہ وہ تو جانتے بھی نہیں کہ اس کتاب کے اندر کیا ہے۔
UN-PAKISTAN-YOUTH-MALALA YOUSAFZAI
ایک بچہ، ایک استاد اور ایک قلم اور کتاب دنیا بدل سکتے ہیں۔ تعلیم ہی واحد حل ہے اور یہی ہمارا نعرہ ہے کہ ‘سب سے پہلے تعلیم’۔
text-of-malala
میری روح مجھے یہ بتاتی رہی ، “پرامن رہو اور ہر کسی سے پیار کرو”۔
5334484-Malala-Celebrates-16th-Birthday-With-UN-Address
ایک وقت تھا کہ خواتین کے حقوق کے لیے مردوں کو آواز اٹھانے کیلیے کہا جاتا تھاپر آج یہ ہم خود کر رہی ہیں۔
Malala Yousafzai at the United Nations Headquarters in New York
آج ہم دنیا کے لیڈران سے سوال کرتے ہیں کہ وہ اپنی پالیسیاں امن اور بھائی چارے کے فروغ کی طرف موڑ دیں۔

ہم تمام حکومتوں سے مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ دہشت گردی اور تشدد کیخلاف لڑیں تاکہ بچوں کو اس کے بُرے اثرات سے محفوظ کیا جائے۔

ہم تمام طبقات سے مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ ذات، برادری، راسخ عقائد، فرقوں، مذاہب یا جنس پر مبنی منفی سوچ کو مسترد کر دیں۔

آئیے ہم خود اکٹھے متحد ہو کر اپنی ڈھال بن جائیں۔

جب ہم نے بندوقیں دیکھیں تو ہم نے قلم اور کتاب کی اہمیت جان لی۔ شدت پسند کتابوں سے ڈرتے ہیں۔

ہم کامیابی ہرگز نہیں پا سکتے اگر ہم میں سے آدھے بھی نہ اٹھیں۔

شدت پسند تبدیلی سے گھبراتے ہیں اور وہ برابری سے بھی گھبراتے ہیں جو ہمارے معاشرے میں آکر رہے گی۔

آئیے ہم ناخواندگی، غربت، دہشت گردی کے خلاف کتاب اور تعلیم سے ایک عالمی جدوجہد کریں۔

Related Posts

Comments

comments

Leave a reply

required

required

optional



six + 1 =

%d bloggers like this: